میونسپل کمیٹی ممبران توجہ دیں۔۔۔تحریر : شفاعت ملک

میونسپل کمیٹی ممبران توجہ دیں۔۔۔تحریر : شفاعت ملک

شہرمیں صفائی کی صورتحال میں بہتری کے لئے مقامی حکومت کی طرف سے بڑے کوڑے دان رکھ دیئے گئے ہیں۔مگر گندگی کے ڈھیر جوں کے توں موجود ہیں۔ مقامی حکومت کی طرف سے ایک کو شش کی گئی مگر شہریوںکی مدد کے بغیر یہ تما م کوششیں کار گر نہیں ہو پائیں گی۔ ابھی بھی اگر آپ ملاحظہ کریں تو ڈھیر ان کوڑے دانوںکے ساتھ پڑے ہوتے ہیں اور شہری اپنا کوڑا ان کے اندر پھینکنے سے قاصر ہیں۔ عموما ہم لوگ حکومت کی طرف سے اقدامات نہ لینے پر نالاں رہتے ہیں مگر جب کوئی کاوش کی جاتی ہے تو ہماری عدم شمولیت اور عدم دلچسپی کی بدولت سب ضائع ہو جاتا ہے اور حالات پہلے سے بھی ابتر ہو جاتے ہیں۔ اب ضرورت اس امر کی ہے کہ عوام میں اپنی ذمہ داریوں کو لیکر ایک آگاہی مہم چلائی جائے تا کہ کوڑا مخصوص جگہوں پر پھینکنے جیسے معاملات کے ساتھ ساتھ دیگر ذمہ داریوں کی طرف بھی توجہ دلائی جائے۔ میرے پاس اس ضمن میں ایک تجویز بھی ہے اور وہ یہ کہ تمام کونسلرز اپنی اپنی وارڈز میں اس مہم کو شروع کریں تا کہ عوام میں آگاہی پیدا ہو اور ان کی شراکت داری کو یقینی بنایا جائے۔ ایک اور مسئلہ بھی ہے اور وہ یہ کہ ہمارے معزز کونسلرز شاید اپنے آپ کو سرکاری افسر سمجھ بیٹھے ہیں اور اکثر اوقات ایسے کام کرتے نظر آتے ہیں جو کہ سرکاری اہلکاروں کے کر نے کے ہیں۔ اس سلسلے میں بھی سیاسی اکابرین کو ایک آگاہی مہم کی ضرورت ہے تاکہ کونسلرحضرات بھی اپنے کام احسن طریقے سے کر سکیں۔ مقامی حکومت کے اصل فوائد شاید ابھی تک عوام کو مل نہیں سکے اور اس کی وجوہات کچھ بھی ہوں مگر ایک بڑی وجہ شہریوں کی اپنی ذمہ داریا ں پوری نہ کرنا بھی ہے۔ بہت سارے ایسے کام ہیں جو کر نے کے لئے ہمیں کسی کی مدد اور فنڈز کی ضرورت ہی نہیں بس ذرا سی توجہ چاہیئے۔ صفائی کے معاملات میں تو میرے خیال میں مقامی حکومت سے زیادہ ہماری ذمہ داریاں ہیںجو اگر احسن طریقے سے پوری کی جائیں تو میونسپل کمیٹی کے پاس بھی پوری دیانت داری سے کام کر نے کے علاوہ کوئی آپشن ہی نہیں رہے گا۔ اور تلہ گنگ رہنے کے لئے ایک بہتریںجگہ بن جائے گا۔ تجاوزات کا مسئلہ ہو غلط پارکنگ ہو ، ٹریفک کا مسئلہ ہو ، کم عمر ڈرائیورز کی بھرمار ہو اور کئی ایسے روز مرہ کے معاملات ہوں ہم عوام بھی اتنے ہی ذمہ دار ہیں جتنی کہ میونسپل کمیٹی۔ مل جل کر کام کر نے سے، ایک دوسرے کا احساس کر نے سے، اور شہر کو اسی طرح اپنا سمجھنے سے جیسا ہم اپنے گھر کو سمجھتے ہیں، تو ہی مسائل حل ہو نگے۔ اﷲتعالی ہم سب کے لئے آسانیاں پیدا کریں اور ہم سب کے حامی و ناصر ہوں۔ آمین