میونسپل کمیٹی تلہ گنگ اور سرکاری ہسپتالوں میں سینٹری ورکروں کی آ سامیاں خالی ،صفائی کا نظام ابتر ،علاقہ مکین سراپا احتجاج۔

میونسپل کمیٹی تلہ گنگ اور سرکاری ہسپتالوں میں سینٹری ورکروں کی آ سامیاں خالی ،صفائی کا نظام ابتر ،علاقہ مکین سراپا احتجاج۔

تلہ گنگ (خصوصی رپورٹ بول تلہ گنگ )میونسپل کمیٹی تلہ گنگ اور سرکاری ہسپتالوں میں سینٹری ورکروںکی آ سامیاں خالی،صفائی کی صورتحال ابتر ،گلیاں ونالیاں گندگی سے اٹ گئیں علاقہ مکین سراپا احتجاج ۔سابق حکومتوں سے تنگ آ کر یہاں کے باسیوں نے تبدیلی کے نعرہ پر عام انتخابات میں تبدیلی کے حمایت یافتہ امیدواروں کو ووٹ دے کر بھاری اکثریت سے انکو کامیابی دلوائی لیکن چھ ماہ ہو نے کو ہےں تاحال موجودہ حکومت کوئی تبدیلی نہیں لا سکی اور شہری تا حال بھی مسائل کی دلدل میں دھنسے ہوئے ہیں ۔سرکاری ہسپتالوں میں سینٹری ورکرز کی آ سامیاں خالی ہو نے سے ہسپتالوں کی صفا ئی کا نظام ابتر ہو گیا ہے اور متعلقہ حکام سینٹری ورکروں کی خالی آسامیوں پر خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں ،معلوم ہوا ہے کہ سٹی اور ٹی ایچ کیو ہسپتال میں تین تین سینٹری ورکرز کام کر رہے ہیں اس سے قبل مسلم لیگ ن کے دوران حکومت میں سرکاری ہسپتالوں کیلئے ہیلتھ کونسل کے ذریعے فنڈز دئیے جا تے رہے جسمیں ہیلتھ کونسل کی ممبران کی مشاورت سے ہسپتال کی منٹینس اور ڈیلی ویجزپر سینٹری ورکرز کو بھرتی کیا جاتاتھا جس سے ہسپتالوں میں صفائی کی صورتحال بہتر رہی تبدیلی سرکار آ تے ہی ڈیلی ویجز ملازمین کے فنڈز روک دئیے اور ڈیلی ویجز ملازمین کی تنخواہوں کی ادائیگی روکی گئی تو ملازمین بے بس ہو کر گھروں کو لو ٹ گئے اور سینٹری ورکرز نہ ہونے کی وجہ سے اب ہسپتالوں میں صفائی کی صورتحال تسلی بخش نہیں ہے دوسری جانب تلہ گنگ شہر کی صفائی پر نظر ڈالی جائے تو ہر طرف گندگی ہی گندگی نظر آ تی ہے اور میونسپل کمیٹی تلہ گنگ کی انتظامیہ کئی بار پنجاب حکومت سے اپیل کر چکی ہے کہ سینٹری ورکروں کی تعداد اب بڑھائی جا ئے تا کہ تلہ گنگ شہر کو گندگی سے ہم پاک کرنے میں کامیاب ہو سکیں ۔علاقہ مکینوں نے وزیر اعظم پا کستان عمران خان اور وزیر اعلی پنجاب عثمان بزادر سے اپیل کی ہے کہ میونسپل کمیٹی تلہ گنگ اور سرکاری ہسپتالوں میں سینٹری ورکروں کی خالی آ سامیاں پر کی جا ئیں تا کہ ہمیں گندگی سے نجات مل سکے۔