کروڑوں پرمحکمہ پبلک ہیلتھ کے سپرد، تاحال سیوریج سسٹم کا ڈھانچا بھی نہ بن سکا،شہری سراپا احتجاج

کروڑوں پرمحکمہ پبلک ہیلتھ کے سپرد، تاحال سیوریج سسٹم کا ڈھانچا بھی نہ بن سکا،شہری سراپا احتجاج

تلہ گنگ (نما ئندہ بول تلہ گنگ ) سرکاری خزانے سے کروڑوں روپے خرچ اسکے باوجود تلہ گنگ کا سیوریج سسٹم بحال نہ ہو سکا ،تلہ گنگ شہر منی ڈیم بن گیا ،ڈپٹی کمشنر چکوال توجہ دیں ۔تفصیلات کے مطابق دس سال بیت چکے ہیں اور سیوریج سسٹم کیلئے سرکاری خزانے سے کروڑوں روپے محکمہ پبلک ہیلتھ کے سپرد کیے گئے لیکن تاحال تلہ گنگ شہرکا سیوریج سسٹم کا ڈھانچا نہ بن سکا اور شہری اذیت کی زندگی بسر کر نے پر مجبور ہیں ۔شہریوںنے بتایا ہے کہ سیوریج کی لائینوں کا جس نے بھی ٹھیکہ لیا وہ ٹھیکیدار افسران کی خوشامد کر کے ٹائم پاس کر کے چلتا بنتا ہے لیکن کام جوں کا توں ہی ہے اور سیوریج کے فنڈز میں ریکارڈ کرپشن کی گئی لیکن کسی اعلی افسر نے نوٹس لینے کی زحمت گوارہ نہیں کی لیکن ماتحت افسران پر اپنی آ شیر باد کا سلسلہ جاری رکھا ۔تنویر ،عمران ،شیخ ریاض ودیگر نے بتایا ہے کہ سیوریج منصوبے میں کرپشن کو نظر انداز کرنا محکمہ پبلک ہیلتھ کے اعلی افسران کی کارکر دگی پر ایک سوالیہ نشان ہے ، سیوریج منصوبہ مکمل ہو نے کا نام ہی نہیں لے رہا ہے اور بارش کے دنوں میں تلہ گنگ سٹی منی ڈیم بن جاتا ہے اور گندہ پانی گھروں میں داخل ہو جاتا ہے جس سے ہزاروں روپے کی الیکٹرانک اشیاءجل جاتی ہے ۔شہریوں نے ڈپٹی کمشنر چکوال سے اپیل کی ہے کہ سیوریج منصوبے میں کرپشن کرنے والے افسران کیخلاف انکوائری کی جا ئے اور ملوث افسران کو عبرت ناک سزاد لوائی جا ئے تاکہ آ ئندہ کوئی کرپشن کرنے کی جسارت نہ سکے۔