حلقہ این اے 65کی سیاسی صورتحال۔۔۔تحریر :شفاعت ملک

حلقہ این اے 65کی سیاسی صورتحال۔۔۔تحریر :شفاعت ملک

سیاست ایک ایسا کھیل ہے جس میں کبھی بھی کچھ بھی ہوناممکن ہے۔ سردار فیض ٹمن صاحب کا ن لیگ کا ٹکٹ اس کی ایک مثال لی جا سکتی ہے۔ ایک عرصے سے غائب اورسیاست سے تقریباباہر تصور کئے جانے والے سردارفیض ٹمن صاحب بڑے سردار صاحب کو آﺅٹ کرکے خود ان ہوگئے۔ سردار فیض ٹمن صاحب کی انتخابات میں شرکت سے ن لیگ کو فائدے کے ساتھ ساتھ ان کی مشکلات میں شدید اضافہ بھی ہو سکتا ہے۔ سردار ممتاز ٹمن، سردار غلام عباس اور ق لیگ کا گٹھ جوڑ ممکن ہے اور یہ الحاق ن لیگ کے قلعہ میں دراڑیں ڈال سکتا ہے اور عین ممکن ہے قلعہ اس دفعہ فتح بھی ہو جائے۔ سردار فیض صاحب کی آمدمیں ملک سلیم اقبال صاحب کا کردار بھی بتایا جاتا ہے۔ ملک صاحب تو اب انتخابی سیاست میں موجود نہیں ہیں مگر انکے جانشین شہریار اعوان صاحب کے خلاف یہ اتحاد مسائل کھڑے کرے گا۔شہر یار اعوان صاحب کی کارکردگی اور ان کی علاقے کے مسائل کی سمجھ ، کے ساتھ ساتھ ملک سلیم اقبال صاحب کا ذاتی اثر و رسوخ شہر یار اعوان صاحب کے لئے اثاثہ ثابت ہونگے۔ ملک صاحب ایک طویل عرصے سے اس حلقے سے انتخابات میں کامیابی حاصل کرتے آئے ہیں۔ شہر یار صاحب تھوڑے عرصے میںہی ایک اچھی ساکھ بنانے میں کامیاب رہے ہیں۔ سردار منصور حیات ٹمن صاحب بھی اپنی جماعت سے علیحدگی کے باوجود انتخابات میںشرکت کا اردہ رکھتے ہیں۔سردار صاحب بھی اپنا ایک مخصوص ووٹ بنک رکھتے ہیں اور پی ٹی آئی کو کافی نقصان پہنچا سکتے ہیں۔انتخابات میں ابھی ایک مہینہ باقی ہے۔ ابھی کئی الحا ق بن بھی سکتے ہیں اور موجودہ الحاقوں میں دراڑیں بھی پڑ سکتی ہیں۔ برادری اتحاد کے رہنماﺅں کا کردار بھی ان انتخابات میں اہم کر دار ادا کرے گا۔ ق لیگ کے کئی اہم رہنما پچھلے کچھ عرصے میں علیحدگی اختیار کرکے اپنی راہیں جدا کرچکے ہیں۔ ق لیگ انتشار کا شکار ہے مگر ن لیگ کی ناقص کارکردگی اور آُُپسی طاقت کی رسہ کشی سے ان کا پاس ایک اچھا موقعہ ہے۔ تلہ گنگ میونسپل کمیٹی کے انتخابات میں ق لیگ کی جیت میں ان کی سابقہ کارکردگی کے ساتھ ساتھ ایک بڑا ہاتھ ن لیگ کے اندرونی اختلافات بھی تھے۔ اس دفعہ پی ٹی آئی ،ق لیگ اور اب سردار ممتاز ٹمن صاحب کا گروپ اگر ملکر انتخابی حکمت عملی اپناتا ہے تو ن لیگ کا قلعہ فتح بھی ہو سکتا ہے۔ اﷲتعالی ہم سب کے لئے آسانیاں پیدا کریں اور ہم سب کے حامی و ناصر ہوں۔ آمین