پنجاب حکومت کے زیر ہدائت محکمہ سوشل ویلفیئر چکوال کی خدمات۔۔۔۔ تحریر :تابندہ امجد

پنجاب حکومت کے زیر ہدائت محکمہ سوشل ویلفیئر چکوال کی خدمات۔۔۔۔ تحریر :تابندہ امجد

ےوں تو تمام سرکاری محکمے کسی نا کسی طرح سے خدمت خلق کر رہے ہیں لیکن محکمہ سوشل ویلیئر عوام الناس کی بھلائی کے کام کرتا ہے معذور اور بے سہارا افراد کو ہنر مند بنا کر معاشرے کا مفید شہری بناکر خودکفالت کے قابل بنانا ہے۔حکومت نے بے سہاراافراد کی کفالت اور نگہداشت کے لیئے بہت سے اقدامات کیئے ہیں۔محکمہ سوشل ویلفیئر اس سلسلے میں بہت اہم کردار ادا کر راہا ہے۔ڈسٹرکٹ آفیسر سوشل ویلفیئر چکوال نے بتاےا کہ سوشل وےلفیئر کا مرکزی دفتر چکوال میں ہے۔چوآسیدن شاہ اور تلہ گنگ میں سب آفس موجود ہیں۔چوا سےدن شاہ میں کمیونٹی ڈیویلپمنٹ پراجیکٹ پر کام ہو رہا ہے۔جسے کلر کہار اور چوا ٓسیدن شاہ کی این جی اوز چلا رہی ہیں اسی طرح چوا ٓسیدن شاہ اور تلہ گنگ میں میڈیکل سوشل سروسسز ےونٹ کام کر رہے ہیں جسے مقامی این جی اوز چلا رہی ہیں۔ تحصیل چکوال میںucdp) )اربن کمیونٹی ڈیویلپمنٹ پراجیکٹ کام کر رہا ہے۔میڈیکل سوشل سروسسز ےونٹ میں کمیو نٹی ڈیو ےلپمنٹ پراجےکٹ کے تحت غریب و نادار مریضوں کوزکوہ فنڈ سے ادویات لے کر دی جاتی ہیں۔اس وقت ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرہسپتال چکوال میں میڈیکل سوشل آفیسرمنیر افضل نیازی ہیں۔تلہ گنگ میںاثناءاعوان ہیںجو کمےونٹی ڈیویلپمنٹ پراجیکٹ اور میڈیکل سوشل سروسسزےونٹ دونوں کو ڈیل کرتی ہیں۔
اس کے علاوہ صنعت زار ایک بہت ہی اہم ادارہ ،محکمہ سوشل وےلفےئر کے تحت کام کر ر ہا ہے۔اس ادارے میں 5 ٹیچرز ہیں جو بچیوں کو کوکنگ،بیوٹیشن،کمپیوٹر،سلائی کڑھائی اور ہینڈی کرافٹ کا کام سیکھاتے ہیں۔پھر جب ےہ بچیاں فارغ ا لتحصیل ہو جاتی ہیں تو ان کو سلائی مشین،بےوٹیشن کو میک اپ کٹس اور کمپےوٹر والوں کو اور ہینڈی کرافٹس والوں کو بھی کٹس دی جاتی ہیں تاکہ ےہاں سے فارغ ہونے کے بعد ےہ بچیےاں اپنا رزق و روزگار کما کر اہنے خاندانوں کا مالی بوجھ کم کر سکیں۔ اس کے علاوہ صنعت زار اور لٹریسی کے تعاون سے معاشرے کے ٹھکرائے ہوے طبقہ خواجہ سراﺅں کی بھی تربےت کی جاتی ہے۔چکوال میںابھی ےہ پروگرام ابھی شروع نہیں ہوا لیکن دوسرے اضلاع میں انکی دینی ،اخلاقی اور فنی تعلیم و تربےت کا پروگرام شروع ہو چکا ہے۔جہاں پر خواجہ سراﺅں کی دینی تعلیم و تربےت کا بندوبست کیا گیا ہے۔ وہاں پر انکو سلایءکڑھائی اور بےوٹیشن کی کلاسسز کروائی جاتی ہیں ےہاں سے اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعد ےہ خواجہ سرائاپنا کام شروع کر سکتے ہیں۔کورس کے اختتام پر انکو سلائی مشینین اور میک اپ کٹس دی جاتی ہیں تاکہ ےہ اپنا کام شروع کر کے با عزت روزگار کما سکیں۔اس کے علاوہ انکے ہسپتالوں میں فرہ طبی معائنے اور علاج کے لیئے خدمت کارڈز بھی دئے گئے ہیں اور انکو لیگل ایڈ بھی دی جا رہی ہے تاکہ ےہ اپنا قانونی طور پر دفاع کر سکیں۔ابھی چکوال میں ےہ سروس شروع نہیں کی گئی۔بہرحال مستقبل قریب میں ےہاں بھی معاشرے کے اس ٹھکرائے ہوئے طبقے فلاح و بہبود کے منصوبہ جات شروع ہو جایںگے۔
ادارہ صنعت زار اس سلسلے میں بہت اہم کردار ادا کر رہا ہے۔بچیےاں ہاتھ سے گھر میں فالتو سامان کو موئثر طریقے سے استعمال میں لاکر بیشمار کاآمد اشےائ،ڈیکوریشن کا سامان تےار کرتی ہیں۔ادارہ انکی بنائی ہوئی مصنوعات،ہینڈی کرافٹس کوڈسپلے کرنے کے لیئے باقاعدہ نمائش کا اہتمام کرتا ہے ۔اس دفعہ صوبہ بھر سے تمام صنعت زار کے ادارے اپنی اپنی ہینڈی کرافٹس کی نمائش کریں گے ےہ نمائش قزافی سٹیڈےم ،کلچرل کمپلیکس میں4,3اور 5اپریل ۸۱۰۲ءکو لگائی جا رہی ہے۔وہان پر نہ صرف نمائش لگائی جائے گی بلکہ انکو سیل سنٹرز بھی دیئے جائینگے۔دارلاا مان بھی محکمہ سوشل ویلفیئر کی ہءایک شاخ ہے جہاں پر دکھی اور حلات کی ستائی ہوئی خواتین پناہ لیتی ہیں۔ےہاں پر نہ صرف انکو پناہ دی جاتی ہے بلکہ انکو کھانے پینے کے ساتھ ساتھ لیگل ایڈ بھی مہےا کی جاتی ہے۔تاکہ انھیں قانونی تحفظ دےا جا سکے۔علاوہ ازیں ےہ خواتین بھی مختلف دستکاریاں اور دینی،فنی،اخلاقی تعلیم حاصل کرتی ہیں تاکہ اپنا مقام بنا سکیں۔ اس وقت دارلاامان چکوال میں ۰۱ خواتین زیر سر پرستی ہیں۔اس وقت چکوال مین کل ۶۷ این جی اوز کام کر رہی ہیں۔ان این جی اوز کے دو ےونٹ ہیں۔مجلس عاملہ اور مجلس انتظامیہ۔کسی بھی بل کی منظوری ان دونوں ےونٹس کی رضا مندی سے ہوتی ہے۔تلہ گنگ میں انجمن بہبود مریضاں کی خدما ت گراںقدر ہیں ان کے پاس اپنی اےمبولےنس بھی ہے۔تلہ گنگ میں فری میدیکل کیمپس بھی لگائے جاتے ہیں۔جہاں پر فری طبی علاج معالجہاور ادوےات بھی مریضوں کو فراہم کی جاتی ہیں۔